پلوامہ حملے پر معلومات پاکستان کے حوالے کردیں ، بھارتی میڈیا

پلوامہ حملے پر معلومات پاکستان کے حوالے کردیں ، بھارتی میڈیا

کراچی پلوامہ حملے کی غیر جانبدرانہ تحقیق کی عمران خان کی پیشکش کے جواب میں بھارتی حکومت نے دستاویزات (ڈوزئیر) پاکستان کے حوالے کی ہیں ۔ بھارتی وزارت خارجہ کے بیان کے مطابق ڈوزئیر میں پلوامہ حملے میں جیش محمد کے ملوث ،پاکستان میں ان کے کیمپس اور قیادت کے ہونے کی تفصیلات ہیں،بیان میں کہا گیا کہ یہ پیغام پہنچایا گیا کہ بھارت پاکستان سے امید کرتا ہے کہ وہ ان کے خلاف فوری کارروائی کرے گا۔ عالمی میڈیا کے مطابق پاک بھارت کشیدگی باعث تشویش ہے،1971کے بعد پہلی بار دونوں ممالک کے درمیان اتنی کشیدہ صورت حال ہوئی۔دونوں ممالک جنگ نہیں چاہتے، یہ عمران خان اور مودی کے لئے خطرناک ہوگا ۔بھارت چوتھی اور پاکستان تیرہویں طاقتور فوج ہے۔روس نے اسلام آباد اور نئی دہلی کے درمیان ثالثی کی پیش کش کردی۔ جوہری جنگ میں پاکستان اور بھارت ایک سو بم استعمال کریں گے ، دو کروڑ دس لاکھ افراد ہلاک اوردو ارب لوگ فاقہ کشی کا شکا ر ہوسکتے ہیں۔پاکستان اور بھارت کے درمیان سنگین سرحدی کشیدگی کے بعد عالمی برادری پر امن

مذاکرات کے ذریعے کشیدگی کو کم کرنے پر زور دے رہی ہے۔ روس،فرانس،امریکا اور نیپال نے باضابطہ بیانات جاری کیے ہیں اور پاک بھارت کشیدگی پر اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے۔روس نے اسلام آباد اور نئی دہلی کے درمیان ثالثی کی پیش کش کی ہے۔روس نے کہا کہ پاکستان اور بھارت ایسی کوششیں کریں کہ وہ سیاسی اور سفارتی ذرائع استعمال کرتے ہوئے مسائل حل کریں۔ سارک کے رکن ملک نیپال نے پاکستان اور بھارت کو کسی بھی ایسی صورت حال کارروائی میں نہ جانے کا مشورہ دیا ہے جس سے خطے کے امن اور سلامتی کو خطرہ درپیش ہو۔دونوں ممالک مسائل کا حل ڈائیلاگ اور پرامن ذارئع میں تلاش کریں۔امریکا نے دونوںممالک کے وزرائے خارجہ سے ملٹری ایکشن سے گریز کرنے کا مشورہ دیا ہے۔فرانس نے بھی دونوں ممالک کی بگڑتی صورت حال پر تشویش کا اظہار کیاہے۔اور دونوں ممالک سے کشیدگی کم کرنے پر زور دیا ہے۔بھارتی خبررساں ادارے نے لکھا کہ پائلٹ کی گرفتاری کے بعد نئی دہلی نے کہا ہے کہ پاک بھارت تعلقات پر جنگ کے بادل گہرے ہوگئے ہیں ۔وزیر اعظم عمران خان نے کشیدگی کو کم کرنے کی کوشش کی ہے ۔امریکی ٹی وی بلوم برگ نے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان حالیہ کشیدگی1971کی جنگ کے بعد سب سے بدتر ہے، جس نے مارکیٹوں شدید متاثر کیا ہے علاقے میں کمرشل فلائٹیں معطل ہیں۔ دونوں ممالک بھرپور جنگ نہیں چاہتے، یہ عمران خان اور مودی دونوںکے لئے خطرناک ہوگا ،عمران خان کو داخلی سطح پر معاشی مسائل کا سامنا ہے مودی کو چند ہفتوں میں مشکل ترین انتخابات کا سامنا ہے، بھارت میں قوم پرستی اس وقت عروج پر ہے۔دونوں رہنما اخلاقی فتح کا دعویٰ کررہے ہیں۔ لیکن یہ معمولی جھڑپیں خطرناک صورت اختیار کرسکتی ہیں۔ قطری نشریاتی ادارے نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان تنازع مزید شدت اختیار کرسکتا ہے لیکن جنگ دونوں کے مفاد میں نہیں۔برطانوی اخبار ایکسپریس نے لکھا کہ بھارت کے دوملٹری جیٹ گرائے جانے کے بعد پاکستان نے ائیر اسپیس بند کردی،جس سے یومیہ8سو فلائیٹس متاثر ہوئی جو پاک بھارت کوریڈور کواستعمال کرتی ہیں۔بھارت چوتھی اور پاکستان تیرہویں طاقتور فوج ہے،پاکستان کا اتحادی چین اور سعودی عرب ہے۔ترکی بھی پاکستان کی طرف ہے

Share this post

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *